Monday June 24, 2024

بڑے یورپی ملک میں مسلمانوں پر حملوں میں تشویش ناک اضافہ

برلن(ویب ڈیسک)جرمنی میں غیر مسلم انتہا پسندوں کی جانب سے مسلمانوں پر حملوں میں تشویش ناک اضافہ ہوگیاہے۔ہفتہ کو وزارت داخلہ کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا کہ گزشتہ سال مسلم مخالف حملوں کا ڈیٹا جمع کرنا شروع کردیا گیا ہے،جس سے اس بات انکشاف ہوا ہے کہ جرمنی میں مسلمانوں اور مسلم اداروں پر حملوں میں اضافہ ہوگیا ہے۔ غیر ملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق وزارت داخلہ کی جانب سے کہا گیا کہ گزشتہ سال مسلمانوں

اور مسلم اداروں پر 950 حملے ہوئے جن میں 33 افراد زخمی ہوئے، مساجد پر بھی 60 حملے کیے گئے جن میں سے بعض واقعات میں خنزیر کا خون اور گوشت پھینکا گیا۔دوسری جانب ہفتہ کو مسلم سینٹرل کونسل کے سربراہ ایمان میزیک نے اپنے ایک بیان میںکہا کہ جرمنی میں مسلمانوں اور مسلم اداروں پر زیادہ تر حملوں میں دائیں بازو کے انتہا پسند ملوث پائے گئے،پچھلے چند سال میں ہونے والے حملوں کا ڈیٹا موجود نہیں۔انہوں نے کہا کہ اس سے پہلے مسلمان مخالف حملوں کی نگرانی بھی نہیں کی جاتی تھی،حملوں کے متاثرین بھی پولیس کو رپورٹ درج نہیں کراتے تھے،تاہم اب جرمن حکومت نے ملک میں مسلمانوں اور مسلم اداروں پر حملوں کا ریکارڈ مرتب کرنا شروع کردیا ہے

FOLLOW US