Wednesday May 22, 2024

گھروں میں موجود سونے سے بھی زیادہ قیمتی دھات جس سے آپ لاعلم ہیں

چمک، قیمت، نایابیت اور مانگ کی وجہ سے سونا دنیا کی پانچ سب سے قیمتی دھاتوں میں شامل ہے، لیکن ایک دھات ایسی بھی ہے جو ممکنہ طور پر ہر گھر میں موجود ہے لیکن سونے سے بھی مہنگی ہے۔ اس وقت ”روڈیم“ دنیا کی سب سے مہنگی اور نایاب دھات ہے، جس کی قیمت 10,300 ڈالر فی اونس ہے۔ لیکن روڈیم اتنا مہنگا کیوں ہے؟ روڈیم کا تعلق ٹرانزیشن میٹل سیریز سے ہے اور آکسیجن کیمیائی طور پر اس پر کوئی اثر پیدا نہیں کرتا، اس کی یہی خوبی اسے ایک عمدہ دھات کے طور پر درجہ بند کراتی ہے۔ اپنی انوکھی خاصیت کی وجہ سے یہ زنگ لگنے اور آکسیڈیشن دونوں کے خلاف مزاحم ہے۔ اپنی غیر معمولی سختی اور 1,964 ڈگری سیلسیس کے نقطہ پگھلاؤ کے ساتھ روڈیم پلاٹینم گروپ کی دھاتوں میں اپنا مقام رکھتا ہے، جن میں پیلیڈیم، اوسمیم، پلاٹینم، اریڈیم اور روتھینیم بھی شامل ہیں۔

روڈیم کی 600 ڈگری سیلسیس تک درجہ حرارت کو برداشت کرنے کی قابل ذکر صلاحیت اور زیادہ تر تیزابوں میں اس کی حل پذیری اسے مختلف صنعتوں بشمول آٹوموٹیو، ہوا بازی، برقی اجزاء، اعلی درجہ حرارت کے تھرموکپلز میں ایک انمول دھات بناتی ہے۔ برٹش رائل سوسائٹی آف کیمسٹری کے مطابق، زمین کی پرت میں روڈیم محض 0.000037 حصے فی ملین کے حساب سے پایا جاتا ہے، جب کہ سونا تقریباً 0.0013 حصے فی ملین کے حساب سے ہے۔

روڈیم کی پیداوار بنیادی طور پر جنوبی افریقہ اور روس میں ہوتی ہے، اور یہ اکثر تانبے اور نکل کو صاف کرنے کے بعد نکالا جاتا اور ان کا 0.1 فیصد تک ہوتا ہے۔ سالانہ تقریباً 16 ٹن روڈیم تیار کیا جاتا ہے، جس کا تخمینہ 3,000 ٹن ریزرو ہے۔ روڈیم کی دریافت 1803 میں ہوئی تھی، جس کا سہرا ایک انگریز کیمیا دان ولیم ہائیڈ وولاسٹن کو دیا گیا۔ وولسٹن نے یہ عنصر جنوبی امریکہ سے نکلنے والے پلاٹینیم ایسک کے ٹکڑے سے نکالا۔

یہ پیش رفت وولسٹن کی جانب سے پلاٹینم دھاتوں کے ایک اور گروپ کی شناخت کے بعد ہوئی، جس میں پیلیڈیم بھی شامل ہے۔ پلاٹینم کے ذخائر کے ساتھ اس کی عام وابستگی کی وجہ سے روڈیم کو پلاٹینم اور پیلیڈیم کو ہٹا کر ولاسٹن کے نمونے سے الگ تھلگ کر دیا گیا، جس کے نتیجے میں گہرا سرخ پاؤڈر نکلا۔ اس کے بعد، ہائیڈروجن گیس کی وجہ سے قیمتی دھات روڈیم کا انکشاف ہوا۔

اس کی ٹھوس چاندی جیسی سفید شکل اور عکاسی خصوصیات کے باوجود، روڈیم نے اپنا نام یونانی لفظ ”روڈن“ سے اخذ کیا، جس کا مطلب ہے گلاب۔ یہ نام دھاتی نمکیات کے سرخ رنگ کی طرف اشارہ کرتا ہے۔ حیرت کی بات یہ ہے کہ اس کی نایابیت اور خوبصورتی کے باوجود 2019 کے اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ روڈیم کی تقریباً 90 فیصد ڈیمانڈ کیٹیلیٹک کنورٹرز کے لیے آٹوموٹیو کیٹیلیسٹ سیکٹر سے آتی ہے۔ روڈیم کا بنیادی استعمال مرکب دھاتوں میں سخت کرنے والے ایجنٹ کے طور پر کیا جاتا ہے، اور یہ عام طور پر پلاٹینم اور پیلیڈیم میں شامل کیا جاتا ہے۔

یہ مرکب بھٹیوں، ری ایکٹرز، لیبارٹری کے سامان ، زیورات بنانے، الیکٹرانک اجزاء میں برقی روابط (اس کی کم برقی مزاحمت کی وجہ سے)، صنعتی کیمیائی رد عمل میں ایک عامل کے طور پر کام کرنا ( ایک سٹیریوسیلیکٹیو عمل کے ذریعے نایاب امینو ایسڈ L-DOPA کی تیاری میں سہولت فراہم کرنا)، آپٹیکل آلات (ایک الیکٹرولیسس کے عمل کے ذریعے، جو روڈیم کو متاثر کن طاقت فراہم کرتا ہے) اور کوٹنگ شامل ہیں۔ بلاشبہ، اس قیمتی دھات کے یہ استعمال زمین کی نایاب ترین قیمتی دھاتوں میں سے ایک کے لیے غیر معمولی لگ سکتے ہیں۔

FOLLOW US