Wednesday May 22, 2024

توہین عدالت: طلال چوہدری کو وکیل مقرر کرنے کیلئے ایک ہفتے کی مہلت

اسلام آباد سپریم کورٹ نے وزیر مملکت برائے داخلہ طلال چودھری کو توہین عدالت کیس میں وکیل مقرر کرنے کے لیے ایک ہفتے کی مہلت دے دی۔ جسٹس اعجاز افضل کی سربراہی میں جسٹس مقبول باقر اور جسٹس فیصل عرب پر مشتمل سپریم کورٹ کے 3 رکنی بنچ نے طلال چوہدری کے خلاف کیس کی سماعت کی۔ سماعت کے موقع پر طلال چوہدری سپریم

کورٹ میں پیش ہوئے، ان کے ہمراہ مسلم لیگ (ن) کے سینئر رہنما سینیٹر پرویز رشید اور وزیر مملکت طارق فضل چوہدری بھی تھے۔سماعت کے آغاز پر طلال چوہدری نے عدالت عظمیٰ سے وکیل مقرر کرنے کے لیے 3 ہفتوں کا وقت طلب کیا۔ جسٹس اعجاز افضل نے استفسار کیا، ‘تین ہفتے کیوں، تین سال کیوں نہیں؟’ جس پر طلال چوہدری نے جواب دیا کہ ‘وکیل مصروف ہوتے ہیں، اس لیے تین ہفتے کی مہلت طلب کی ہے’۔ تاہم عدالت عظمیٰ نے وزیر مملکت طلال چوہدری کی دخواست مسترد کرتے ہوئے انہیں ایک ہفتے کی مہلت دے دی اور کیس کی سماعت منگل (13) فروری تک کے لیے ملتوی کردی گئی۔ واضح رہے کہ عدلیہ مخالف تقریر پر آرٹیکل 184 (3) کے تحت چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چودھری کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کیا تھا۔

FOLLOW US